22

علیم خان کے پاس ایک نہیں کئی وزارتیں ہوں گی

معروف صحافی ہارون رشید کا کہنا ہے کہ پنجاب میں علیم خان وزیر بن گئے ہیں اور وہ کوئی عام وزیر نہیں ہے۔علیم خان کے پاس ایک نہیں کئی وزارتیں ہوں گی۔آئی جی پنجاب اور چیف سیکرٹری کو بتا دیا جائے گا کہ علیم خان کے ساتھ تعاون کیا جائے۔علیم خان اور جہانگیر ترین میں فرق ہے۔علیم خان لوزٹاک نہیں کرتے۔
عثمان بزدار اور علیم خان کے درمیان کوئی تلخی نہیں ہوگی۔ہارون رشید نے مزید کہا کہ پچھلے اٹھارہ مہینوں میں کئی سیاستدان ٹاؤن شپ والی جیل میں گئے۔نواز شریف ،شہباز شریف اور حمزہ شہباز بھی اس جیل میں گئے۔لیکن صرف ایک آدمی ایسا تھا جس نے یہ کہا کہ اس جیل کے اندر میں نے تو جتنے دن گزارنے سے گزار لیے لیکن آج کے بعد یہاں ہر قیدی کو ٹھنڈا پانی ملے گا ،کھانا اچھا ملے گا۔
مریضوں کا علاج کیا جائے گا،ہر قیدی کے سر پر پنکھا ہوا گا اور اس کے لیے تمام اخراجات میں ادا کروں گا اور وہ آدمی علیم خان ہیں۔اس کے بعد انہوں نے اپنی ٹیم بنائی۔جیل سپریڈنٹ اور ڈپٹی سپریڈنٹ کو اعتماد میں لیا۔اور پھر انہوں نے ایک ماہ میں یہ کام مکمل کرکے گورنر صاحب کو کہا کہ اس کا افتتاح کریں۔ہارون رشید کا مزید کہنا تھا کہ اس وقت عمران خان کے پاس جو ٹیم ہے اس میں علیم خان سب سے بہترین ہیں،اگر علیم خان سے بات کی جائے تو ان کی میجمنٹ سے گندم کا بحران پیدا نہیں ہو گا۔
قبل ازیں تجزیہ نگار عمران یعقوب کا کہنا تھا کہ عبدالعلیم کی کابینہ میں واپسی سے عثمان بزدار پریشان ہو گئے ہیں۔ کچھ دن قبل وزیراعظم عمران خان نے عبدالعلیم خان کو سینئر وزیر بنایا ہے ،تب سے وزیراعلی پنجاب عثمان بزدار خود کو غیر محفوظ سمجھنے لگ گئے ہیں۔ں، وہ پریشان ہو گئے ہیں اور ان کی پریشانی صاف نظر آ رہی ہے۔ تجزیہ نگار کا مزید کہنا تھا کہ عبد العلیم بلدیات اور داخلہ کی وزارت لینا چاہتے تھے لیکن انہیں خوراک کا قلمدان سونپ دیا گیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں